allama iqbal poetry in urdu

Allama Iqbal Poetry In Urdu

Allama Iqbal poetry in Urdu

سجدوں سے تیرے کیا ہوا صدیاں گزر گئیں
دنیا تیری بدل دے وہ سجدہ تلاش کر
ایمان تیرا لُٹ گیا رہزن کے ہاتھوں سے
ایمان تیرا بچا لے وہ رہبر تلاش کر
کرے سوار اُنٹ پہ اپنے غلام کو
پیدل ہی خود چلے وہ آقا تلاش کر
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اپنے کردار پہ ڈال کہ پردہ اقبال
ہر شخص کہ رہا ہے زمانہ خراب ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دوا کی تلاش میں رہا
دعا کو چھوڑ کر
میں چل نہ سکا دنیا میں
خطاوں کو چھوڑ کر
حیران ہوں میں
اپنی حسرتون پر اقبال
ہر چیز خدا سے مانگ لی
مگر خدا کو چھوڑ کر۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
خواہشیں بادشاہوں کو غلام بنا لیتی ہیں
مگر صبر غلاموں کو بادشاہ بنا دیتا ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تیری رحمتون پہ ہے منحصر، میرے ہر عمل کی قبولیت
نہ مجھے سلیقہٗ اِلتجا، نہ مجھے شعورِ نماز ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وطن کی فکر کر ناداں مصیبت آنے والی ہے
تری بربادیوں کے مشورے ہیں آسمانو میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ملاقاتیں عروج پر تھیں تو جوابِ ازان تک نہ دیا اقبال
صنم جو روٹھا ہے تو آج موذن بنے بیٹھے ہیں۔۔۔
نہ کلمہ یاد آتا ہے نہ دل لگتا ہے نمازون میں اقبال
کافر بنا دیا ہے لوگوں کو دو دن کی محبت نے۔۔۔۔
کتنی عجیب ہے گناہوں کی جستجو اقبال۔۔۔
نماز بھی جلدی میں پڑھتے ہیں پھر سے گناہ کرنے کے لئے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بات سجدوں کی نہیں خلوص نیت کی ہوتی ہے اقبال
اکثر لوگ خالی ہاتھ لوٹ آتے ہیں ہر نماز کے بعد۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ستاروں سے آگے جہاں اور بھی ہیں
ابھی عشق کے امتحان اور بھی ہیں
تہی زندگی سے نہیں یہ فضائیں
یہاں سینکڑوں کارواں اور بھی ہیں
قناعت نہ کر عالم رنگ و بو پر
چمن اور بھی آشیاں اور بھی ہیں
اگر کھو گیا اک نشیمن تو کیا غم
مقامات آہ و فغاں اور بھی ہیں
تو شاہین ہے پرواز ہے کام تیرا
تیرے سامنے آسماں اور بھی ہیں
اسی روز و شب میں الجھ کر نہ رہ جا
کہ تیرے زمان و مکاں اور بھی ہیں
گئے دن کہ تنہا تھا میں انجمن میں یہاں اب میرے رزداں اور بھی ہیں
۔۔۔۔۔۔
بروز حشر میں بے خوف گھس جاوں گا جنت میں
وہاں سے آئے تھے آدم وہ میرے باپ کا گھر ہے
جواب شکوہ
ان اعمال کے ساتھ جنت کا طلبگار ہے کیا۔۔
وہاں سے نکالے گئے آدم تو تیری اوقات ہے کیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نہیں ڈرتے دلاورِ رنج و غم سے
نہ پرواہ ہے اُنھیں کچھ آسماں کی
بہائیں بھی اگر آنسو کبھی وہ
علامت جانئے سوزِ نہاں کی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عشق قاتل سے بھی، مقتول سے ہمدردی بھی
یہ بتا کس سے محبت کی جزا مانگے گا؟
سجدہ خالق کو بھی، ابلیس سے یارانہ بھی
حشر میں کس سے عقیدت کا صلہ مانگے گا؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اس قوم کو شمشیر کی حاجت نہیں رہتی
ہو جس کے جوانوں کی خودی صورتِ فولاد
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کوئی قابل ہو تو ہم شان کئی دیتے ہیں
ڈھونڈنے والون کو دنیا بھی نئی دیتے ہیں۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بھری بزم میں راز کی بات کہ دی
بڑا بے ادب ہوں سزا چاہتا ہوں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نگاہ فقر میں شان سکندری کیا ہے
خراج کی جو گدا ہو، وہ قیصری کیا ہے
بتوں سے تجھ کو امیدیں، خدا سے نومیدی
مجھے بتا تو سہی اور کافری کیا ہے
فلک نے ان کو عطا کی ہے خواجگی کہ جنہیں
خبر نہیں روش بندہ پروری کیا ہے
فقط نگاہ سے ہوتا ہے فیصلہ دل کا
نہ ہو نگاہ میں شوخی تو دلبری کیا ہے
اسی خطا سے عتاب ملوک ہے مجھ پر
کہ جانتا ہوں مآل سکندری کیا ہے
کسے نہیں ہے تمنائے سروری، لیکن
خودی کی موت ہو جس میں وہ سروری کیا ہے
خوش آگئی ہے جہاں کو قلندری میری
وگرنہ شعر مرا کیا ہے، شاعری کیا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دل میں خدا کا ہونا لاز م ہے اقبال۔
سجدوں میں پڑے رہنے سے جنت نہیں ملتی۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دل سے جو بات نکلتی ہے اثر رکھتی ہے
پر نہی طاقت پرواز مگر رکھتی ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اگر بدلوں تیری خاطر ہر اِک چیز تو کہنا
تو اپنے اندر پہلے اندازِ وفا تو پیدا کر
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سجدوں کے عوض فردوس ملے یہ بات مجھے منظور نہیں
بے لوث عبات کرتا ہوں بندہ ہوں تیرا مزدور نہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
گونگی ہو گئی آج کچھ زبان کہتے کہتے
ہچکچا گیا خود کو مسلماں کہتے کہتے
یہ بات نہیں کہ مجھ کو اُس پر یقین نہیں
بس ڈر گیا خود کو صابِ ایماں کہتے کہتے
توفیق نہ ہوئی مجھ کو اک وقت کی نماز کی
اور چپ ہوا موزن آزان کہتے کہتے
کسی کافر نے جو پوچھا ہے کونسا مہینہ
شرم سے پانی ہاتھ سے گر گیا رمضان کہتے کہتے
میری الماری میں گرد سے اٹی کتاب کا جو پوچھا
میں گڑ گیا زمین میں قراں کہتے کہتے
یہ سُن کہ چپ سادھ لی اقبال اس نے
یوں لگا جیسے رُک گیا وہ مجھے حیوان کہتے کہتے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جفا جو عشق میں ہوتی ہے وہ جفا ہی نہیں
ستم نہ ہو تو محبت میں کچھ مزہ ہی نہیں۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہم مشرق کے مسکینوں کا دل مغرب میں جا اٹکا ہے
واں کنڑسب بلّوری ہیں یاں ایک پُرانا مٹکا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نشہ پلا کر گرانا تو سب کو آتا ہے
مزہ تو جب ہے کہ گر توں کو تھام لے ساقی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلوں کی عمارتوں میں کہیں بندگی نہیں
پتھر کی مسجدوں میں خُدا ڈھونڈتے ہیں لوگ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یوں تو سید بھی ہو، مرزا بھی ہو، افغان بھی ہو
تم سبھی کچھ ہو بتاو تو تم مسلمان بھی ہو؟
۔۔۔۔۔۔۔۔
برا سمجھوں انہیں، مجھ سے تو ایسا ہو نہیں سکتا
کہ میں خود بھی تو ہوں اقبال اپنے نقتہ چینیوں میں
۔۔۔۔۔۔۔۔
اس راز کو اک مرد فرنگی نے کیا فاش
ہر چند کہ دانا اسے کھولا نہیں کرتے
۔۔۔۔۔۔۔
تمنا درد دل کی ہو تو کر خدمت فقیروں کی
نہیں ملتا یہ گوہر بادشاہوں کے خزینوں میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اللہ سے کرے دور، تو تعلیم بھی فتنہ
املاک بھی اولاد بھی جاگیر بھی فتنہ
ناحق کے لئے اٹھے تو شمشیر بھی فتنہ
شمشیر ہی کیا نعرہ تکبیر بھی فتنہ
۔۔۔۔۔۔۔۔
قوتِ عشق سے ہر پست کو بالا کر دے
دہر مین اسمِ محمد سے اجالا کر دے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نگاہ بُلند، سُخن دِلنواز، جاں پُرسوز
یہی ہے رختِ سفر میرِ کارواں کے لئے