parveen shakir poetry in urdu

parveen shakir poetry in urdu

Parveen Shakir Poetry In Urdu

شہر کو تیری جستجو ہے بہت

ان دنوں ہم پہ گفتگو ہے بہت۔۔۔

Shahar ko teri justaju hai bohot

In dino ham pe guftagu hai bohot


جہاں سوال کے بدلے سوال ہوتا ہے

وہاں سے محبتوں کا زوال ہوتا ہے

کسی کو اپنا بنانا ہنر ہی سہی 

کسی کا بن کے رہنا کمال ہوتا ہے

Jahan sawal ke badle sawal hota hai

Wahan se muhabbaton ka zawal hota hai

Kisi ko apna banana huner hi sahi

Kisi ka ban ke rehna kamal hota hai


تلاش کر میری کمی کو اپنے دل میں

درد ہو تو سمجھ لینا رشتہ اب بھی باقی ہے۔

Talash kar meri kami ko apne dil main

Dard ho to samajh lena rishta ab bhi baqi hai.


 اب تو اس راہ سے وہ شخص گزرتا بھی نہیں

اب کس امید پہ دروازے سے جھانکے کوئی

Ab to is rah se wo shakhs Guzarta bhi nahi

Ab kis umeed se darwaze sy jhanke koyi?


صبا تو کیا کہ مجھے دھوپ تک جگا نہ سکی

کہاں کی نیند اُتر آئی ہے ان آنکھوں میں

Saba tu kiya keh mujhe dhoop tak jga na saki,,,

Kahan ki neend uter ayi hai in Akhon main…


کوئی رات میرے آشنا مجھے یوں بھی تو نصیب ہو

نہ رہے خیال لباس کا وہ اتنا میرے قریب ہو

بدن کی گرم آنچ سے میری آرزو کو آگ دے

میرا جوش بہک اٹھے میرا حال بھی عجیب ہو

تیرے چاشنی وجود کا سارا رس میں نچوڑ لوں

پھر تو ہی میرا مرض ہو اور تو ہی میرا طبیب ہو

Koyi raat mere ashna mujhe yu bhi naseeb ho

Na rahe khayaal-e-libas wo itna mere qareeb ho

Badan ki garam aanch se meri arzu ko aag de

mera josh behak uthe mera haal bhi ajeeb ho

tere chashni wajood ka sara ras main nichor lu

phr tu hi mera marz ho aur tu hi mera tabib ho.


میں پھول چنتی رہی اور مجھے خبر نہ ہوئی

وہ شخص آ کے مرے شہر سے چلا بھی گیا

Main phool chunti rahi aur mujhe khabar na huwi

wo shakas aa ke mere shehar se chala bhi gaya


ممکنہ فیصلوں میں ایک ، ہجر کا فیصلہ بھی تھا

ہم نے تو ایک بات کی، اس نے کمال کر دیا

Mumkina faislon main aik, Hijar ka faisla bhi tha

Ham ne to aik baat ki, us ne kamaal ker diya


تیری خوشبو کا پتہ کرتی ہے

مجھ پہ احسان ہوا کرتی ہے

شب کی تنہائی میں اب تو اکثر 

گفتگو تجھ سے رہا کرتی ہے

دل کو اُس راہ پہ چلنا ہی نہیں

جو مجھے تجھ سے جدا کرتی ہے۔

زندگی میری تھی لیکن اب تو

تیرے کہنے میں رہا کرتی ہے

اس نے دیکھا ہی نہیں ورنہ یہ آنکھ

دل کا احوال کہا کرتی ہے

Teri khushboo ka pata krti hai

Mujhe pe ehsaan hawa kerti hai

Shab ki tanhai main ab to aksar

Guftagu tujh se raha kerti hai

Dil ko is rah pe chalna hi nahi

Jo mujhe tujh se juda kerti hai

Zindagi meri thi lekin ab to

Tere kehne main raha kerti hai

Us ne dekha hi nahi werna ye aankh

Dil ka ehwal kaha kerti hai…


جب سے پرواز کے شریک ملے

گھرے بنانے کی آرزو ہے بہت

Jab se parwaaz ke shareek mile

Ghar banane ki aarzu hai bohot…


کو بہ کو پھیل گئی بات شنا سائی کی

اسنے خوشبو کی طرح میری پذیرائی کی

کیسے کہ دوں کہ مجھے چھوڑ دیا ہے اس نے

بات تو سچ ہے مگر بات ہے رسوائی کی

وہ کہیں بھی گیا لوٹا تو میرے پاس آیا

بس یہی بات ہے اچھی میرے ہرجائی کی

تیرا پہلو ترے دل کی طرح آباد رہے

تجھ پہ گزرے نہ قیامت شب تنہائی کی

اسنے جلتی ہوئی پیشانی پہ جب ہاتھ رکھا

روح تک آگئی تاثیر مسیحائی کی

Ku ba ku phail gayi baat shana sayi ki

Us ne khushboo ki terha meri pazeerayi ki

Kese keh du keh mujhe chord diya hai us ne

Baat to sach hai mager baat hai ruswayi ki

Wo kahin bhi gaya lota to mere pas aya

Bas yahi baat hai achi mere harjayi ki

Tera pehlu tere dil ki terha abaad rahe

Tujh pe guzre na qayamat shab-e-tanhayi ki

Us ne jalti huwi peshani pe jab hath rakha

Rooh tak aa gayi taseer maseehai ki…


وہ جا چکا ہے

مگر جدائی سے قبل کا

ایک نرم لمحہ 

ٹحر گیا ہے

مری ہتھیلی کی پشت پر

زندگی میں

پہلی کا چاند بن کر۔

Wo ja chuka hai

Magar judayi se qabal

Aik naram lamha

Tahar gya hai

Meri hatheli ki pusht per

zindagi main

pehli ka chand ban ker….


پھر دیدہ و دل کی خیر یارب

پھر ذہن میں خواب پل رہا ہے۔

Phir deedah-o-dil ki khair ya rab

Phir zehan main khuwaab pal raha hai


اک نام کیا لکھا ترا ساحل کی ریت پر

پھر عمر بھر ہوا سے میری دشمنی رہی

Ik naam kiya likha tera sahil ki rait par,,,

Phir umar bhar hawa se meri dushmani rahi.


رفاقتوں کے نئے خواب خوش نما ہیں مگر

گزر چکا ہے ترے اعتبار کا موسم

Rafaqaton ke naye khuwaab Khush numa hian mager

Guzer chuka hai tere aitbaar ka mosam…


مجھ پہ چھا جائے وہ برسات کی خوشبو کی طرح

انگ انگ اپنا اسی رُت میں مہکتا دیکھوں

Mujh pe cha jaye wo barsaat ki khushboo ki terha

Ang ang apna isi rut main mehakta dekhu….


ساتھ چھوڑنا اور دل توڑنا الگ باتیں ہیں

خدا نے کب دی اجازت خیانت کرنے کے لئے

Sath chorna aur dil torna alag baten hain,,,

Khuda ne kab di ijazat khayanat karne ke liye…


میں اپنی دوستی کو شہر میں رسوا نہیں کرتی

محبت میں بھی کرتی ہوں مگر چرچا نہیں کرتی۔

main apni dosti ko shahar main ruswa nahi kerti,,,

Muhabbat main bhi kerti hu mager charcha nahi kerti…


نگاہوں کے تصدم سے عجب تکرار کرتا ہے

یقیں کامل نہیں لیکن، گماں ہے پیار کرتا ہے

لرز جاتی ہوں میں یہ سوچ کر، کہیں کافر نہ ہوجاوں

دل اس کی پوجا پہ بڑا اسرار کرتا ہے

اسے معلوم ہے شاید میرا دل ہے نشانے پر

لبوں سے کچھ نہیں کہتا، نظر سے وار کرتا ہے

میں اس سے پوچھتی ہوں خواب میں، مجھ سے محبت ہے۔۔۔۔۔

پھر آنکھیں کھول دیتی ہوں، وہ جب اظہار کرتا ہے۔۔۔

Nigahon ke tasadum se ajab takrar karta hai,,

yaqeen kaml nahi lekin, gumaan hai piyaar karta hai

Laraz jati hu main ye soch ker, kahin kafir na ho jaun

Di us ki pooja per bada israar kerta hai

Us maloom hai shayad mera dil hai nishane per

Labon se kuch nahi kehta, nazer se waar kerta hai

main us se poochti hu khuwaab main, mujh se muhabbat hai…..

Phir ankhen khol deti hu,,,,, wo jab izhaar kerta hai….


ٹوٹی ہے میری نیند مگر تم کو اس سے کیا؟

بجتے رہیں ہواوں سے در تم کو اس سے کیا؟

اوروں کا ہاتھ تھا مو انہیں راستہ دکھاو۔۔۔۔۔۔۔

میں بھول جاوں اپنا ہی گھر تم کو اس سے کیا؟

tooti hai meri neend mager tum ko is se kiya,,,

Bajte rahen hawaon se dartam ko is se kiya?

Auron ka hath thamo inhe rasta dikhao……

main bhool jaun apna hi ghar tum ko is se kiya?

 


میں کچھی نیند میں ہوں

اور اپنے نیم خوابیدہ تنفس میں اُترتی

چاندنی کی چاپ سُنتی ہوں

گمان ہے

آج بھی شاید

میرے ماتھے پہ تیرے لب

ستارے ثبات کرتے ہیں۔

main kachi neend main hu

aur apney neem khwabida tanafus main utarti

chandani ki chaap sunti hu

gumaan hai

aaj bhi shayad

mere mathe pe tere lab

sitare sabaat kerte hain…


آج تو اس پہ ٹھرتی ہی نہ تھی آنکھ ذرا

اس کے جاتے ہی نظر میں نے اتاری اس کی

Aaj to us pe theharti hi na thi aankh zra

us ke jate hi nazer main ne utari us ki


یہ دُکھ نہیں کہ اندھیروں سے صُلح کی ہم نے،

ملال یہ ہے کہ اب صبح کی طلب بھی نہیں۔

ye dukh nahi ke andheeron se sulah ki ham ne

malaal ye hai ke ab subha ki talab bhi nahi…


وہ تو خوشبو ہے ہواوں میں بکھر جائیگا،

مسلہ پھول کا ہے پھول کدھر جائیگا۔

Wo to khusbhoo hai hawaon main bikhar jayega

masla phool ka hia phool kidhar jaye ga…


یہ غُربتیں مری آنکھوں میں کیسی اُتری ہیں

کہ خواب بھی مرے رخصت ہیں، رتجگا بھی گیا

Ye ghurbaten meri aankhon main kese utri hain

ke khuwaab bhi mere rukhsat hain, ratjgah bhi gya…


میں بھی ٹھروں کسی کے ہونٹوں پر

میری خاطر دعا کرے کوئی۔

main bhi thehru kisi ke honthon per

meri khatir dua kere koyi…


چلنے کا حوصلہ نہیں رُکنا محال کر دیا

عشق کے اس سفر نے تو مجھ کو نڈھال کر دیا

Chalne ka hosla nahi rukhna mahaal ker diya

ishq ke is safar ne to mujh ko nidhaal ker diya…


سو کھے ہوئے پتوں کو غرض کیا ہو بہار سے

اس کی عید کہاں جو بچھڑے ہو اپنے یار سے۔

Sookhe huwa paton ko gharz kiya ho bahaar se…

Us ki eid kiya jo bichre hon apne yaar se


تو بدلتا ہے تو بے ساختہ میری آنکھیں

اپنے ہاتھون کی لکیروں سے الجھ جاتی ہیں۔

Tu badalta hai to be sakhta meri aankhen

Apne hathon ki lakeeron se ulajh jati hain


اگرچہ تجھ سے بہت اختلاف بھی نہ ہوا

مگر دل تری جانب سے صاف بھی نہ ہوا

Agercha tujh se bohot ikhtelaaf bhi na huwa

mager dil teri jaanib se saaf bhi na huwa….


یوں بجھڑنا بھی بہت آساں نہ تھا اس سے مگر

جاتے جاتے اس کا وہ مڑ کر دوبارہ دیکھنا۔۔۔

Yu bicharna bhi bohot asaan na tha us se mager

jate jate us ka wo mur ker dubara dekhna….


اس دل میں شوق دید زیادہ ہی ہو گیا

اس آنکھ میں مرے لئے انکار جب سے ہے۔

Dil main shoq-e-deed ziyada hi ho gya

Us aankh main mere liye inkaar jab se hai…


ضرورتوں نے ہمارا ضمیر چاٹ لیا

وگرنا قائل رزقِ حلال تھے ہم بھی

Zaroorton ne hamara zameer chaat liya

Wagerna qayal rizq-e-halaal the ham bhi


کوئی فیصلہ تو ہو کہ کدھر جانا چاہیے

پانی کو اب تو سر سے گزر جانا چاہیے۔۔۔

Koyi faisla to ho ke kidhar jana chahiye

Pani ko ab to sar se guzer jana chahiye…


یہ کب کہتی ہوں تم میرے گلے کا ہار ہو جاو

وہیں سے لوٹ جانا تم جہاں سے بے زار ہو جاو

ملاقاتوں میں وقفہ اس لئے ہونا ضروری ہے

کہ تم اک دن جدائی کے لئے تیار ہو جاو

Ye kab kehti hu ke tum mere gale ka haar ho jao

Wahin se laot jana tum jahan se be zaar ho jao

Mulaqaton main waqfa is liye hona zaroori hai

ke tum ik din judayi ke liye tayaar ho jao…


تو مرا کچھ نہیں لگتا ہے مگر جانِ حیات

جانے کیوں تیرے لئے دل کو دھڑکتا دیکھوں

Tu mera kuch nahi lagta hai mager jaan-e-hayaat

Jane kiyu tere liye dil ko dharakta dekhu


جس طرح خواب مرے ہو گئے ریزہ ریزہ

اس طرح سے نہ کبھی ٹوٹ کے بکھرے کوئی

Jis terha khuwab mere ho gaye reza reza

is terha se na kabhi toot ke bikhre koyi


برسات میں بھی یاد نہ جب انکو ہم آئے

پھر کون سے موسم سے کوئی آس لگائے۔۔

Barsaat main bhi yaad na jab unko ham aye

phir kon se mosam se koyi aas lagaye…


میں کہوں اُسے فون کروں

اُس کے بھی تو علم میں ہو گا

کل رات موسم کی پہلی بارش تھی۔۔۔

main kahun use phone kerun

us ke bhi to ilam main ho ga

kal raat mosam ki pehli barish thi….


وہ اپنی ایک ذات میں کل کائنات تھا

دنیا کے ہر فریب سے ملوا دیا مجھے

Wo apni zaat main kul kayenaat tha

duniya ke har fareeb se milwa diya mujhe…


Read more: